آج لیجنڈ شاعر ساحر لدھیانوی کی برسی ہے

Comments · 447 Views

بہت ہی خوب صورت شاعری کے خالق ساحر کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں

آج نامور شاعر اور نغمہ نگار ساحر لدھیانوی کی برسی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ساحر کا اصل نام عبدالحئی تھا، وہ 8 مارچ1921ء لدھیانہ کے ایک جاگیردار خاندان میں پیدا ہوئے۔

طالبِ علمی کے زمانے میں ہی ان کا شعری مجموعہ تلخیاں شائع ہوچکا تھا، جس نے اشاعت کے بعد دھوم مچا دی تھی۔

سن 1949 میں وہ لاہور سے بمبئی گئے اور اسی سال ان کی پہلی فلم 'آزادی کی راہ' ریلیز ہوئی۔
لیکن اصل شہرت موسیقار ایس ڈی برمن کے ساتھ 1950 میں فلم نوجوان میں ان کے لکھے ہوئے نغموں کو نصیب ہوئی ان میں سے ایک گانے 'ٹھنڈی ہوائیں' کی دھن تو ایسی ہٹ ہوئی کہ عرصے تک اس کی نقل ہوتی رہی۔

ایس ڈی برمن اور ساحر کی جوڑی نے یکے بعد دیگرے کئی فلموں میں کام کیا جو آج بھی یادگار ہے، ان فلموں میں بازی، جال، ٹیکسی ڈرائیور، ہاؤس نمبر 44، منیم جی اور پیاسا وغیرہ شامل ہیں۔

ساحر کی دوسری سب سے تخلیقی شراکت روشن کے ساتھ تھی، خصوصاً فلم 'برسات کی رات' کے گانوں نے بھی بہت مقبولیت حاصل کی تھی۔ اس فلم کا گانا زندگی بھر نہیں بھولے گی وہ برسات کی رات سال کا مقبول ترین نغمہ قرار پایا۔

اس کے علاوہ اسی فلم کی قوالی، نہ تو کارواں کی تلاش ہے نہ تو ہمسفرکی تلاش ہے، آج بھی فلمی دنیا کی سب سے مقبول قوالی سمجھی جاتی ہے۔

ساحر نے کئی دوسرے موسیقاروں کے ساتھ بھی کام کیا:
ملتی ہے زندگی میں محبت کبھی کبھی، نیلے گگن کے تلے، چھو لینے دو نازک ہونٹوں کو، میں نے چاند اور ستاروں کی تمنا کی تھی، میں جب بھی اکیلی ہوتی ہوں، دامن میں داغ لگا بیٹھے، ابھی نہ جاؤ چھوڑ کر کہ دل ابھی بھرا نہیں، میں زندگی کا ساتھ نبھاتا چلا گیا اور رات بھی ہے کچھ بھیگی بھیگی جیسے مقبول گیت شامل ہیں۔

گرودت کی 'پیاسا' اور یش راج کی 'کبھی کبھی' کی کہانی ساحر کی اپنی زندگی سے ماخوذ تھی۔

کبھی کبھی کے گیت کون بھول سکتا ہے جیسے کبھی کبھی میرے دل میں یہ خیال آتا ہے یا میں پل دو پل کا شاعر ہوں۔

انھوں نے اپنی فنی زندگی میں دوبار فلم فیئر ایوارڈ جیتے، جس میں پہلا 1964 میں فلم 'تاج محل' کے گیت جو وعدہ کیا وہ بنھانا پڑے گا اور دوسرا کبھی کبھی کی شاعری پر 1977 میں اپنے نام کیا۔

(حسن پرست اور عاشق مزاج ساحر لدھیانوی نے شادی نہ کی۔ اس کا کہنا تھا کہ ”کچھ لڑکیاں مجھ تک دیر سے پہنچیں اور کچھ لڑکیوں تک میں دیر سے پہنچا“ اس کا اظہار ان کے گیتوں”جسے توقبول کرلے، وہ ادا کہاں سے لاوٴں“، ”تم نہ جانے کس جہاں میں کھو گئے“ سے ہوتا ہے۔ امرتا پریتم نے ساحر کو ٹوٹ کرچاہا۔ جی جان سے چاہا۔ ساحر امرتا کے دل کی آواز نہ سن سکا۔ امروز سے شادی کے بعد بھی امرتا پریتم اسے نہ بھول سکی۔ ایک بار امرتا کے بیٹے نے ماں سے سوال کیا۔ ”ماں کیا میں ساحر کا بیٹا ہوں“ امرتا نے جواب دیا ”کاش یہ سچ ہوتا“۔
لیکن وقت نے ثابت کیا کہ ساحر پل دو پل کے شاعر نہیں تھے اور انہوں نے جو کچھ کہا وہ کارِ زیاں نہیں تھا۔)

اس لیے برسوں گزر جانے کے باوجود ان کے نغمے آج بھی عوام کے درمیان مقبول ہیں، 25 اکتوبر 1980 کو اس البیلے شاعر کا ممبئی میں انتقال ہوا۔

ساحر نے دنیا کو اور کچھ دیا ہو یا نہ دیا ہو خواب ضرور دئیے ہیں، وہ خواب جو بڑی تبدیلی کا باعث ہوتے ہیں۔

خواب اگر مرجائیں تو دنیا ایک بے کیف اور بنجر ویرانے میں تبدیل ہوجائے ساحر لدھیانوی ہمیں جس صبح کی امید دلاتا رہا وہ صبح ابھی آئی تو نہیں لیکن آئے گی ضرور۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منتخب اشعار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﭘﮭﺮ ﻧﮧ ﮐﯿﺠﮯ ﻣﺮﯼ ﮔﺴﺘﺎﺥ ﻧﮕﺎﮨﯽ ﮐﺎ ﮔِﻠﮧ
ﺩﯾﮑﮭﺌﮯ، ﺁﭖ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﭘﯿﺎﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻣﺠﮭﮯ​
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی زندہ ہوں لیکن سوچتا رہتا ہوں خلوت میں
کہ اب تک کس تمنا کے سہارے جی لیا میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس رینگتی حیات کا کب تک اٹھائیں بار
بیمار اب الجھنے لگے ہیں طبیب سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس اب تو دامن دل چھوڑ دو بیکار امیدو
بہت دکھ سہہ لیے میں نے بہت دن جی لیا میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ کو خبر نہیں مگر اک سادہ لوح کو
برباد کر دیا ترے دو دن کے پیار نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبت ترک کی میں نے گریباں سی لیا میں نے
زمانے اب تو خوش ہو زہر یہ بھی پی لیا میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کس درجہ دل شکن تھے محبت کے حادثے
ہم زندگی میں پھر کوئی ارماں نہ کر سکے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﺣﯿﺎﺕ ﺍﮎ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﻏﻢ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ
ﺧﻮﺷﯽ ﺑﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ​
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کے رخسار پہ ڈھلکے ہوۓ آنسو توبہ
میں نے شبنم کو بھی شعلوں پہ مچلتے دیکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون روتا ہے کسی اور کی خاطر اے دوست
سب کو اپنی ہی کسی بات پہ رونا آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لو آج ہم نے توڑ دیا رشتہء امید
لو اب کبھی گلا نہ کریں گے کسی سے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مانا کہ اس زمیں کو نہ گلزار کر سکے
کچھ خار کم تو کر گۓ گزرے جدھر سے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مایوسئی مآل محبت نہ پوچھیۓ
اپنوں سے پیش آۓ ہیں بیگانگی سے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بَشرطِ استواری

خُونِ جمہور میں بھیگے ہُوئے پرچم لے کر
مجھ سے افراد کی شاہی نے دُعا مانگی ہے
صُبح کے نُور پہ تعزِیز لگانے کے لیے
شب کی سنگِین سیاہی نے وَفا مانگی ہے

اور یہ چاہا ہے کہ میں قافلۂ آدم کو
ٹوکنے والی نِگاہوں کا مددگار بنُوں
جس تصوّر سے چراغاں ہے سرِ جادۂ زِیست
اُس تصوِیر کی ہزِیمت کا گنہگار بنُوں

ظلم درپردہ قوانین کے ایوانوں سے
بیڑیاں تکتی ہیں، زنجیر صدا دیتی ہے
طاقِ تادِیب سے اِنصاف کے بُت گھُورتے ہیں
مسندِ عدل سے شمشیر صدا دیتی ہے

لیکن اے عظمتِ اِنساں کے سُنہرے خوابو
میں کسی تاج کی سطوت کا پرِستار نہیں
میرے افکار کا عنوانِ اِرادت تم ہو
میں تمھارا ہُوں، لُٹیروں کا وَفادار نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یادِ رفتگاں

پھر وہ عزیز و اقربأ
جو توڑ کر عہد وفا

احباب سے منہ موڑ کر
دنیا سے رشتہ توڑ کر

حدِّافق سے اس طرف
رنگِ شفق کے اس طرف

اِک وادئ خاموش کی
اِک عالمِ مدہوش کی

گہرائیوں میں سو گئے
تاریکیوں میں کھو گئے

ان کا تصور ناگہاں
لیتا ہے دل میں چٹکیاں

اور خوں رلاتا ہے مجھے
بے کل بناتا ہے مجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لوگ عورت کو فقط جسم سمجھ لیتے ہیں
رُوح بھی ہوتی ہے اُس میں یہ کہاں سوچتے ہیں

رُوح کیا ہوتی ہے اِس سے اُنہیں مطلب ہی نہیں
وہ تو بس تن کے تقاضوں کا کہا مانتے ہیں

رُوح مرجائے، تو ہر جسم ہے چلتی ہوئی لاش
اِس حقیقت کو سمجھتے ہیں نہ پہچانتے ہیں

کئی صدیو ں سے یہ وحشت کا چلن جاری ہے
کئی صدیوں سے ہے قائم یہ گناہوں کا رواج

لوگ عورت کی ہر اِک چیخ کو نغمہ سمجھیں
وہ قبیلوں کا زمانہ ہو، کہ شہروں کا سماج

جبر سے نسل بڑھے، ظلم سے تن میل کرے
یہ عمل ہم میں ہے، بے علم پرندوں میں نہیں

ہم جو اِنسانوں کی تہذیب لیے پھرتے ہیں
ہم سا وحشی کوئی جنگل کے درندوں میں نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ظلم پھر ظلم ہے، بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے
خون پھر خون ہے، ٹپکے گا تو جم جائے گا

خاک صحرا پہ جمے یا کف قاتل پہ جمے
فرقِ انصاف پہ یا پائے سلاسل پہ جمے
تیغ بیداد پہ، یا لاشۂ بسمل پہ جمے
خون پھر خون ہے، ٹپکے گا تو جم جائے گا

لاکھ بیٹھے کوئی چھپ چھپ کے کمیں گاہوں میں
خون خود دیتا ہے جلادوں‌کے مسکن کا سراغ
سازشیں لاکھ اوڑھاتی رہیں ظلمت کا نقاب
لے کے ہر بوند نکلتی ہے ہتھیلی پہ چراغ

ظلم کی قسمتِ ناکارہ و رسواسے کہو
جبر کی حکمتِ پرکارکے ایماسے کہو
محملِ مجلسِ اقوام کی لیلیٰ سے کہو
خون دیوانہ ہے ‘ دامن پہ لپک سکتا ہے
شعلہء تند ہے ‘خرمن پہ لپک سکتا ہے

تم نے جس خون کو مقتل میں دبانا چاہا
آج وہ کوچہ و بازار میں آنکلا ہے
کہیں شعلہ، کہیں نعرہ، کہیں پتھر بن کر
خون چلتا ہے تو رکتا نہیں سنگینوں‌سے
سر اٹھاتا ہے تو دبتا نہیں آئینوں‌ سے

ظلم کی بات ہی کیا، ظلم کی اوقات ہی کیا
ظلم بس ظلم ہے آغاز سے انجام تلک
خون پھر خون ہے، سو شکل بدل سکتا ہے
ایسی شکلیں کہ مٹاؤ تو مٹائے نہ بنے
ایسے شعلے کہ بجھاؤ تو بجھائے نہ بنے
ایسے نعرے کہ دباؤ تو دبائے نہ بنے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مادام

آپ بے وجہ پریشان سی کیوں‌ ہیں مادام؟
لوگ کہتے ہیں تو پھر ٹھیک ہی کہتے ہوں گے
میرے احباب نے تہذیب نہ سیکھی ہوگی
میرے ماحول میں انسان نہ رہتے ہوں گے

نورِ سرمایہ سے ہے روئے تمدّن کی جِلا
ہم جہاں ‌ہیں وہاں‌ تہذیب نہیں پل سکتی
مفلسی حسِّ لطافت کو مٹا دیتی ہے
بھوک آداب کے سانچوں‌ میں نہیں ڈھل سکتی

لوگ کہتے ہیں تو لوگوں ‌پہ تعجب کیسا؟
سچ تو کہتے ہیں کہ ناداروں کی عزت کیسی
لوگ کہتے ہیں۔۔۔ مگر آپ ابھی تک چپ ہیں
آپ بھی کہیے، غریبوں میں شرافت کیسی

نیک مادام! بہت جلد وہ دَور آئے گا
جب ہمیں زیست کے ادوار پرکھنے ہوں گے
اپنی ذلت کی قسم! آپ کی عظمت کی قسم!
ہم کو تعظیم کے میعار پرکھنے ہوں گے

ہم نے ہر دور میں تذلیل سہی ہے، لیکن
ہم نے ہر دور کے چہرے کو ضیا بخشی ہے
ہم نے ہر دور میں ‌محنت کے ستم جھیلے ہیں
ہم نے ہر دور کے ہاتھوں ‌کو حنا بخشی ہے

لیکن ان تلخ مباحث سے بھلا کیا حاصل؟
لوگ کہتے ہیں تو پھر ٹھیک ہی کہتے ہوں‌ گے
میرے احباب نے تہذیب نہ سیکھی ہوگی
میں جہاں ‌ہوں، وہاں انسان نہ رہتے ہوں گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کبھی کبھی مرے دل میں خیال آتا ہے

کہ زندگی تری زلفوں کی نرم چھاوں میں
گزرنے پاتی تو شاداب ہو بھی سکتی تھی

یہ تیرگی جو مری زیست کا مقدر ہے
تری نظر کی شعاعوں میں کھو بھی سکتی تھی

عجب نہ تھا کہ میں بے گانہء الم ہو کر
ترے جمال کی رعنائیوں میں کھو رہتا

ترا گداز بدن، تیری نیم باز آنکھیں
انہیں حسین فسانوں میں محو ہو رہتا

پکارتیں مجھے جب تلخیاں زمانے کی
ترے لبوں سے حلاوت کے گھونٹ پی لیتا

حیات چیختی پھرتی برہنہ سر اور میں
گھنیری زلفوں کے سائے میں چھپ کے جی لیتا

مگر یہ ہو نہ سکا اور اب یہ عالم ہے
کہ تو نہیں ترا غم، تری جستجو بھی نہیں

گزر رہی ہے کچھ اس طرح زندگی جیسے
اسے کسی کے سہارے کی آرزو بھی نہیں

زمانے بھر کے دکھوں کو لگا چکا ہوں گلے
گزر رہا ہوں کچھ انجانی رہ گزاروں سے

مہیب سائے مری سمت بڑھتے آتے ہیں
حیات و موت کے پرہول خارزاروں میں

نہ کوئی جادہء منزل نہ روشنی کا سراغ
بھٹک رہی ہے خلاوں میں زندگی میری

انہی خلاوں میں رہ جاوں گا کبھی کھو کر
میں جانتا ہوں کہ مری ہم نفس مگر یونہی

کبھی کبھی مرے دل میں خیال آتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ﺗﺎﺝ ﻣﺤﻞ

ﺗﺎﺝ، ﺗﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺍﮎ ﻣﻈﮩﺮِ ﺍُﻟﻔﺖ ﮨﯽ ﺳﮩﯽ
ﺗُﺠﮫ ﮐﻮ ﺍﺱ ﻭﺍﺩﺉ ﺭﻧﮕﯿﮟﺳﮯ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﮨﯽ ﺳﮩﯽ

ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﻮﺏ ! ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻼ ﮐﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ
ﺑﺰﻡِ ﺷﺎﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﺎ ﮔﺰﺭ ﮐﯿﺎ ﻣﻌﻨﯽ؟
ﺛﺒﺖ ﺟﺲ ﺭﺍﮦ ﭘﮧ ﮨﻮﮞ ﺳﻄﻮﺕِ ﺷﺎﮨﯽ ﮐﮯ ﻧﺸﺎﮞ
ﺍﺱ ﭘﮧ ﺍﻟﻔﺖ ﺑﮭﺮﯼ ﺭﻭﺣﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﮐﯿﺎ ﻣﻌﻨﯽ؟

ﻣﺮﯼ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﭘﺲِ ﭘﺮﺩﮦِ ﺗﺸﮩﯿﺮ ﻭﻓﺎ
ﺗﻮ ﻧﮯ ﺳﻄﻮﺕ ﮐﮯ ﻧﺸﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﺮ ﺳﮯ ﺑﮩﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ
ﻣُﺮﺩﮦ ﺷﺎﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﺮ ﺳﮯ ﺑﮩﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ
ﺍﭘﻨﮯ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﻣﮑﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ

ﺍﻥ ﮔﻨﺖ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﮨﮯ
ﮐﻮﻥ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺻﺎﺩﻕ ﻧﮧ ﺗﮭﮯ ﺟﺬﺑﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ
ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﺸﮩﯿﺮ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ
ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﻔﻠﺲ ﺗﮭﮯ

ﯾﮧ ﻋﻤﺎﺭﺍﺕ ﻭ ﻣﻘﺎﺑﺮ، ﯾﮧ ﻓﺼﯿﻠﯿﮟ، ﯾﮧ ﺣﺼﺎﺭ
ﻣﻄﻠﻖ ﺍﻟﺤﮑﻢ ﺷﮩﻨﺸﺎﮨﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﻈﻤﺖ ﮐﮯ ﺳﺘﻮﮞ
ﺳﯿﻨﮧ ﺩﮨﺮ ﮐﮯ ﻧﺎﺳﻮﺭ ﮨﯿﮟ ﮐﮩﻨﮧ ﻧﺎﺳﻮﺭ
ﺟﺬﺏ ﮨﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﮮ ﺍﺟﺪﺍﺩ ﮐﺎ ﺧﻮﮞ

ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﻮﺏ ! ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﻮﮔﯽ
ﺟﻦ ﮐﯽ ﺻﻨﺎﺋﯽ ﻧﮯ ﺑﺨﺸﯽ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﺷﮑﻞِ ﺟﻤﯿﻞ
ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﯿﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﺮ ﺭﮨﮯ ﺑﮯ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﻤﻮﺩ
ﺁﺝ ﺗﮏ ﺍﻥ ﭘﮧ ﭼﻼﺋﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻗﻨﺪﯾﻞ

ﯾﮧ ﭼﻤﻦ ﺯﺍﺭ، ﯾﮧ ﺟﻤﻨﺎ ﮐﺎ ﮐﻨﺎﺭﮦ ﯾﮧ ﻣﺤﻞ
ﯾﮧ ﻣﻨﻘﺶ ﺩﺭﻭﺩﯾﻮﺍﺭ، ﯾﮧ ﻣﺤﺮﺍﺏ، ﯾﮧ ﻃﺎﻕ
ﺍﮎ ﺷﮩﻨﺸﺎﮦ ﻧﮯ ﺩﻭﻟﺖ ﮐﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﻟﮯ ﮐﺮ
ﮨﻢ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﺍﮌﺍﯾﺎ ﮨﮯ ﻣﺬﺍﻕ

ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﻮﺏ ! ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻼ ﮐﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻣﻮﮌ

ﭼﻠﻮ ﺍﮎ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ

ﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﺭﮐﮭﻮﮞ ﺩﻟﻨﻮﺍﺯﯼ ﮐﯽ
ﻧﮧ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻏﻠﻂ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ
ﯾﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﻟﮍﮐﮭﮍﺍﺋﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ
ﻧﮧ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﮐﺸﻤﮑﺶ ﮐﺎ ﺭﺍﺯ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻟﺠﮭﻦ ﺭﻭﮐﺘﯽ ﮨﮯ ﭘﯿﺶ ﻗﺪﻣﯽ ﺳﮯ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﻮﮒ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺟﻠﻮﺋﮯ ﭘﺮﺍﺋﮯ ﮨﯿﮟ

ﻣﺮﮮ ﮨﻤﺮﺍﮦ ﺑﮭﯽ ﺭﺳﻮﺍﺋﯿﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺎﺿﯽ ﮐﯽ
ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮭﯽ ﮔﺰﺭﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﺭﺍﺗﻮﮞﮐﮯ ﺳﺎﺋﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﻌﺎﺭﻑ ﺭﻭﮒ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻟﻨﺎ ﺑﮩﺘﺮ
ﺗﻌﻠﻖ ﺑﻮﺟﮫ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺗﻮﮌﻧﺎ ﺍﭼﮭﺎ
ﻭﮦ ﺍﻓﺴﺎﻧﮧ ﺟﺴﮯ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﺗﮏ ﻻﻧﺎ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻣﻤﮑﻦ
ﺍﺳﮯ ﺍﮎ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻣﻮﮌﺩﮮ ﮐﺮ ﭼﮭﻮﮌﻧﺎ ﺍﭼﮭﺎ

ﭼﻠﻮ ﺍﮎ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بشکریہ خالد محمود

Comments
Usman Qasim 25

Impressive